Zana ke Bary main Hikayat | Larky sy Zana ka Gunah

Blogger template November 22, 2023 November 22, 2023
to read
words
0 comments
Description: Zana ka waqiya. zana karny ka gunah. Larky se zanah ka azab aur Gunah in Urdu. Zanah ka Gunah aur Azab ke bary main islami waqiya urdu main. complete
-A A +A

Zana ke Bary main Hikayat | Larky sy Zana ka Gunah

Larky sy Zana ka Gunah

اللہ تعالی فرماتا ہے۔ ترجمہ۔ اللہ کے بندے وہ ہیں جو اپنی شرم گاہ کی حفاظت کرتے ہیں
بعض صحابہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے کہ زنا سے پرہیز کرو کہ اس میں چھ خرابیاں ہیں تین دنیا میں اور تین اخرت میں دنیا کی خرابیاں رزق کا نقصان عمر کی کمی اور بدنامی ہے اور اخرت کی خرابیاں اللہ کا غضب حساب کی سختی اور دوزخ میں داخل ہونا ہے
روایت ہے کہ حضرت موسی علیہ السلام نے پوچھا کہ یا الہی زنا کی کیا سزا ہے فرمایا کہ اس کو اگ کی ذرا بختر پہناؤں گا کہ اگر وہ کسی اونچے پہاڑ پر ڈالی جائے تو وہ خاکستر ہو جائے کہتے ہیں کہ ایک بدکار زانیہ اور شیطان کو زیادہ پسند ہے بانسبت ہزار بدکار زانی مرد کے

لڑکے سے زنا کا عزاب

حضرت قاضی ایاز رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ میں نے بعض بزرگوں سے سنا ہے کہ ہر ایک عورت کے ساتھ ایک شیطان ہوتا ہے اور ہر ایک لڑکے کے ساتھ 18 شیطان ہوتے ہیں
روایت ہے کہ جو شخص کسی لڑکے کو شہوت سے بوسہ دے تو اللہ اس کو 5 س سال تک اگ میں عذاب دے گا اور جس نے عورت کو شہوت سے بوسہ دیا تو گویا اس نے 70 کنواری عورتوں سے زنا کیا اور جس نے کنواری عورت سے زنا کیا اس نے گویا 70 ہزار بیوہ عورتوں سے زنا کیا

دنیا میں سب سے پہلے لڑکوں سے زنا کا واقعہ

رونق التفاسیر میں ذکر ہے کہ سب سے پہلے جس نے قوم لوط کا کام کیا وہ ابلیس ملعون تھا وہ ان کے پاس ایک خوبصورت بے ریش لڑکے کی صورت میں ایا اور ان کو اپنے پاس بلایا اور ان کو اپنے کام میں لگایا اس سے وہ ہر ایک مسافر کے ساتھ بھی یہی کام کرنے لگے ۔

لڑکے سے زنا کرنے کا عزاب

اللہ تعالی نے حضرت لوط علیہ السلام کو ان کی طرف بھیجا حضرت لوط علیہ السلام نے ان کو اس بد کام سے منع کیا اور اللہ تعالی کی عبادت کی طرف بلایا اور اللہ کے عذاب سے ڈرایا انہوں نے کہا کہ اگر تو سچا ہے تو ہم پر اللہ کا عذاب لا چنانچہ حضرت لوط علیہ السلام نے رب سے دعا کی کہ یا الہی مجھے مفسد قوم پر فتح دے اللہ تعالی نے اسمان کو حکم دیا کہ ان پر پتھر برسا دے کہ ہر ایک پتھر پر اس کا نام ہو جس پر وہ پھینکا جائے
حقائق ہے کہ قوم لوط کا ایک سوداگر عذاب کے وقت مکہ میں تھا ایک پتھر اس پر لگنے کے واسطے حرم میں ایا فرشتوں نے پتھر کو کہا چلا جا یہاں سے ایا ہے کہ وہ شخص ابھی حرم شریف میں ہے پتھر واپس گیا اور 40 راتیں رم کے باہر اسمان و زمین کے درمیان میں کھڑا رہا یہاں تک کہ وہ شخص تجارت کے کام سے فارغ ہو کر جب حرم سے نکلا تو وہ پتھر اس کو لگا اور وہ ہلاک ہو گیا 

Share this post

Blogger template

AuthorBlogger template

You may like these posts

Post a Comment

0 Comments

4324939380394343613
https://www.islamimalumat.com/